مسلمانوں کی سب سے بڑی طاقت اتحاد اور سب سے بڑی کمزوری تفرقہ وانتشار ہے، آج جگہ جگہ مسلمان ظلم وستم کے نشانے پر ہیں تو بنیادی وجہ ان کا عدم اتحاد ہے، جب سے مسلمان آپس میں متحد رہنے کے بجائے تفرقے کا شکار ہوئے، مشترکات کو چھوڑ کر جزئی اختلافات کی بنیاد پر ایک دوسرے سے دور ہونے لگے پستی اور زوال ان کے مقدر کا حصہ بننا شروع ہوا، آج ہم دیکھتے ہیں کہ آپس کے اختلافات نے مسلمانوں کو ایک دوسرے کا جانی دشمن بنادیا ہے، ان میں ایک دوسرے پر کفر وشرک کے فتوے لگانے تک کی جرات پیدا کی ہے، اس صورتحال نے جہاں مسلمانوں کو کمزور سے کمزورتر بنانے میں کردار کیا وہیں یہ مسلمانوں کے دشمنوں کو اپنے ناپاک عزائم میں کامیابی سے ہمکنار کرانے کے لئے بہترین معاون ومددگار ثابت ہورہی ہے، اس وقت مسلمانوں کو ہرجگہ شکست سے دوچار کرانے کے لئے دشمن جس چیز پر سب سے زیادہ سرمایہ خرچ کررہا ہے وہ ایجاد تفرقہ بین المسلمین ہے ـ
اسلام کے دشمن مسلمانوں کے درمیان اختلافات کو ہوا دے کر اپنے مفادات کے حصول میں مگن ہیں، فلسطین، شام ،عراق کشمیر سمیت تمام اسلامی ممالک میں مسلمانوں کے درمیان موجود چھوٹے چھوٹے اختلافات کو بنیاد بناکر دشمنوں نے امت مسلمہ کی جان مال اور عزت وآبرو کے ساتھ وہ کھیل کھیلا جس کی نظیر کم نظر آتی ہےـ

مسلمانوں کی ستم ظریفی کی انتہا یہ ہے کہ اب اسلام کے مخالف عناصر مسلمانوں کے مختلف فرقوں اور مذاہب کے درمیان تفرقہ افکنی کے لئے شبیہ سازی کے ہتھیار سے لیس ہوکر اپنے ناپاک اہداف میں کامیابی حاصل کررہے ہیں ، مطلب یہ ہے کہ وہ شیعہ سنی مسلمانوں میں سے دینی معلومات رکھنے والے افراد کو چن لیتے ہیں، ان کے سامنے ڈالر کے خزینے کا منہ کھول دیتے ہیں ،انہیں کرائے کا غلام بناکر ان کے منہ سے ایسی باتیں نکلواتے ہیں جو امت مسلمہ کے درمیان نفرت اور تفرقے کی آگ جلانے کے لئے تیل کا کام کرتی ہیں ،جس کی واضح مثال شیرازی گروپ اور ذاکر نائیک جیسے لوگ ہیں ، استعمار نے شیرازی ٹولے کو لباس روحانیت میں ملبوس کرکے شیعہ علماء کے روپ میں ظاہر کیا، پھر ان کی زبان سے حضرت عائیشہ سمیت صحابہ کرام کے بارے میں توہین آمیز باتیں نکلواکر سنی مسلمانوں کو شیعوں کے خلاف بھڑکانے کی کوشش کی تو دوسری طرف نائک زاکر جیسے دین کو ثمن قلیل میں بھیج کر دنیا آباد کرنے والے افراد کو سنی مولوی کے روپ میں نمایاں کیا ، پھر ان کے توسط سے شیعوں کے اعتقدات کی توہین کرواکر شیعوں کو سنی مسلمانوں سے متنفر کروانے کی جدوجہد کی گئ، اسی طرح اسلام سے دشمنی رکھنے والوں نے مسلمانوں کی کتابوں میں مرقوم نبی مکرم اسلام کی تاریخ ولادت کے بارے میں موجود اختلاف کو ان کے درمیان فاصلہ بڑھانے کا ذریعہ قرار دیا ،کیونکہ اہلسنت علماء کی نظر میں آنحضرت کی تاریخ ولادت ۱۲ ربیع ہے اور شیعہ محقیقین کے مطابق آپ کی ولادت ۱۷ ربیع کو ہوئی یوں مسلم دشمن عناصر نے جب اس تنکے کے برابر اختلاف کو پہاڑ بنانے کی کوشش کی تو زمانے کی نبض پر ہاتھ رکھنے والی عظیم شخصیت بت شکن رہبر کبیر انقلاب نے ۱۲ ربیع سے ۱۷ ربیع کو ہفتہ وحدت منانے کا فیصلہ کرکے دشمنوں کے برے اہداف وعزائم کو خاک میں ملایا اور ہفتہ وحدت کے برکات وثمرات اب کسی پر پوشیدہ نہیں
مخفی نہ رہے کہ مسلمانوں کے پاس باوقار اور پرسکون طریقے سے جینے کے لئے کسی چیز کی کمی نہیں ، اگر مادی وسائل کے اعتبار سے دیکھا جائے تو مسلمانوں کے پاس عظیم قدرتی زخائر موجود ہیں، علمی اور فکری میدان میں نگاہ کریں تو بڑی علمی اور فکری شخصیات مسلمانوں میں فراون دکھائی دیتے ہیں ،افرادی قوت کے حوالے سے سوچا جائے تو مسلمانوں میں یہ قوت عروج پر نظر آتی ہے ، اگر تہزیب وتمدن کے میدان میں غور کیا جائے تو مسلمانوں کے پاس قدیم تہذیب و تمدن ہے جو دنیا میں کم نظیر ہے ، مختصر یہ کہ ہر میدان میں صلاحیت کے اعتبار سے مسلمانوں میں کوئی کمی نہیں، وہ اسلام ناب محمدی کے زیر سایہ امن اور سکون سے لبریز زندگی بسر کرسکتے ہیں، البتہ اس کے لئے امت مسلمہ کو کچھ نکات پر بھر توجہ دینا ناگزیر ہے ، پہلا نکتہ مسلم تعلیم یافتہ طبقے سے مربوط ہے ـ
۱- ہر مسلمان کو تقلیدی اسلام کے دائرے سے نکلنا ہوگا ،ہمارا المیہ یہ ہے کہ آج مسلمانوں کی اکثریت اس بنیاد پر مسلمان ہے چونکہ اس کا خاندان مسلمان ہے، وہ مسلم گھرانے میں پیدا ہوئی ہے ،اس کے والدین آجداد مسلمان تھے ، پھر اسی معیار پر ہم شیعہ سنی بن جاتے ہیں ، شیعہ گھرانے میں پیدا ہونے والے شیعہ اور سنی خاندان میں آنکھ کھولنے والے سنی مذہب کے پیروکار بن جاتے ہیں، ہم آباء واجداد کی آندہی تقلید کے تاریک ذندان میں اس قدر محبوس ہوجاتے ہیں کہ وہاں سے نکل کر تحقیق کی روشن دنیا میں قدم رکھنے کو ناقابل معاف جرم سمجھاجاتا ہے، آج مسلمانوں کے درمیان روز بروز گہرے ہوتے اختلافات اور پیدا ہونے والے فاصلے کے بارے میں گہرائی اور دقت سے مطالعہ کیا جائے تو سب سے مؤثر سبب اندہی تقلید ہی نظر آتی ہے ، جس نے مسلمانوں کو گروہوں اور فرقوں میں تقسیم کرنے میں بڑا رول ادا کیا ،کیا یہ لمحہ فکریہ نہیں کہ جس قرآن کو ہم سب خدا کی لاریب کتاب ماننے ہیں اس میں صریح طور پر خدا فرمارہا ہے : ان الدین عند الله الاسلام "خدا کے ہاں پسندیدہ دین اسلام ہے تو یہ فرقے کہاں سے آئے؟ یہ مختلف مذاہب کدھر سے پھوٹ پڑے؟ سوچنا تو چاہئے نا کہ خدا کا دین تو ایک ہی ہے ،آج مسلمانوں میں ۷۲ فرقے بلکہ اس سے ذیادہ کیسے وجود میں آئے ؟ ان کی پیدائش کیسے ہوئی؟
اس بات پر مختلف مکاتب فکر سے تعلق رکھنے والوں کا اتفاق واجماع ہے کہ پیغمبر مکرم اسلام (ص)کی حیات کے دوران مسلمانوں میں حنبلی، حنفی مالکی، شافعی، جعفری، بریلوی وغیرہ کا کوئی تصور نہیں تھا، اس زمانے میں سارے مسلمان بس مسلمان تھے، اسلام کے پرچم تلے وہ جمع ہوکر زندگی بسر کرتے ہیں، آنحضرت سے وہ استفادہ کرتے تھے، آپ کی تعلیمات کی روشنی میں وہ اپنی زندگی کے لمحات گزارنے کی کوشش کرتے تھے، یہ اور بات ہے کہ اس زمانے میں آپ کی مجلس میں منافقین بھی حاضر ہوا کرتے تھے، لیکن آج کی طرح گروہ در گروہ میں وہ بٹے ہوئے نہیں تھے، بنابراین قدر متیقن بات یہ ہے کہ آنحضرت( ص) کی رحلت کے بعد ہی امت مسلمہ مختلف گروہوں اور فرقوں میں تقسیم ہوچکی ہےـ اب اس نکتے پر سوچنا ہر مسلمان کی ذمہ داری ہے کہ امت مسلمہ مختلف گروہوں میں تقسیم ہونے کے عوامل واسباب کیا ہیں؟ کیونکہ یقینا یہ سارے تو اہل حق ہرگز نہیں ہوسکتے، صرف وہی گروہ راہ حق پر ہوسکتا ہے جو پیغمبر اکرم (ص) کی راہ پر گامزن ہو، ممکن ہے وہ شیعہ ہو سنی ہو یا کوئی اور گروہ، بنابریں شیعہ یا سنی گھرانے میں پیدا ہونے کی وجہ سے ہمارا والدین کا مذہب اختیار کرنا ہرگز کافی نہیں بلکہ دانشمندی کا تقاضا یہ ہے کہ ہر ایک اپنی بساط کے مطابق اپنے مذہب اور فرقے کے بارے میں حتی المقدور تحقیق کرے ـ اب سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ تحقیق کے منابع کیا ہیں؟ ہم کہاں رجوع کرکے اپنے مذہب کے حق اور باطل ہونے کے بارے میں جستجو اور تحقیق کریں؟ اس کا جواب یہ ہے کہ مذہبی حقانیت کے اثبات کے بارے میں تحقیق کرنے کے لئے منابع اولیہ قرآن مجید اور سنت نبی ہے ـ آج کل اگر ہم مذاہب کے بارے میں تحقیق کرتے بھی ہیں تو ہم شیعہ سنی محقیقین ومصنفین کی تصانیف اور آثار کی طرف رجوع کرتے ہیں جو کہ ہماری نظر میں ناقص کام ہے، کیونکہ اس سے حقیقت تک رسائی حاصل ہونے کا احتمال انتہائی ضعیف ہے ، اس لئے کہ یہ کتابیں تو ہم جیسے بشر کی لکھی ہوئی ہیں، ان میں خطا اور اشتباہ کا قوی امکان پایا جاتا ہے جس کی وجہ سے ہم ان کے آثار پر اعتماد نہیں کرسکتے کیونکہ بسااوقات غیر معصوم انسانوں کی کتابوں میں تعصب مذہبی کا رنگ ہمیں واضح دکھائی دیتا ہے ، مثال کے طور پر جناب فخر رازی کی تفسیر کا مطالعہ کریں وہاں آیہ" ولایت انما ولیکم الله ورسوله والذین آمنوا الذین یقیمون الصلوة والزکاة وھم راکعون" کے زیل میں پہلے انہوں نے اعتراف کیا ہے کہ اس آیت مجیدہ کے آخری حصے کا مصداق علی ابن ابی طالب کی ذات گرامی ہے کیونکہ انہوں نے رکوع کی حالت میں انگشتر سائل کو دی ہے اس کے بعد موصوف نے تعصب مذہبی کا کھلا اظہار کرتے ہوئے ہوئے ایک مضحکہ خیز توجیہ کی ہے لکھا ہے کہ علی ابن ابی طالب کا انگوٹھی اتار کر سائل کو دینا فعل کثیر شمار ہوتا ہے جس کی وجہ سے ان کی نماز باطل ہے اور جس کی نماز ہی باطل ہوجائے وہ مسلمانوں کا ولی نہیں بن سکتا ! آپ ملاحضہ کریں یہاں اولا فخر رازی نے در حقیقت خدا پر اعتراض کیا ہے کیونکہ خدا نے تو خدا ورسول کے بعد نماز قائم کرنے اور رکوع کی حالت میں زکات دینے والے کو ولی قرار دیا ہے مگر جناب فخر رازی نے گویا یوں کہا ہے کہ اے خدا نعوز باللہ آپ کو نہیں پتہ حالت رکوع میں زکات دینا فعل کثیر ہے جو مبطل نماز ہوتا ہے ـ ثانیا یہ خود اہلسنت کے فقہی مبنا کے خلاف ہے ـ اسی طرح زبردست محقق اہلسنت کے برجستہ عالم جناب ابن ابی الحدید معتزلی شارح نہج البلاغہ اپنی کتاب شرح نہج البلاغہ میں برملا یہ اعتراف کرتے ہیں کہ خلفاء میں سب سے افضل حضرت علی ابن ابی طالب ہیں پھر مذہبی تعصب کے ذندان میں قید ہونے کی وجہ سے وہ یہ جملہ لکھتے ہیں " الحمد لله الذی قدم المفضول علی الافضل" حمد مخصوص ہے اس خدا کے لئے جس نے مفضول کو افضل پر مقدم کیا !جب کہ یہ حکم عقل کی صریح مخالفت ہے، ایک نابالغ چھوٹے بچے بھی اس بات کو سمجھتے ہیں کہ ہمیشہ ہر جگہ افضل مفضول پر مقدم ہواکرتا ہے ـ اسی طرح شیعہ مصنفین کی کتب میں بھی تعصب پر مبنی باتیں ہوسکتی ہیں بنابرین مذہبی تحقیق کے لئے منابع اولیہ (قرآن وسنت) کی طرف مراجعہ کرنا بہت ضروری ہے ـ یہاں یہ نکتہ بھی قابل توجہ ہے کہ فریقین کی ساری کتب حدیثی بھی قابل اعتبار نہیں چونکہ ان میں بہت ساری احادیث جعلی بھی گھڑی گئی ہیں، لاتعداد اسرائیلی روایات ان میں شامل کی گئی ہیں، اکثر کتابوں میں صحیح اور غلط حدیثوں کو مخلوط کرکے انہیں چھاپی ہوتی ہیں، تفسیری کتابوں میں غلط تاویلات اور تفسیر بالرائے کا سہارا لیا گیا ہے، ایسے میں حقائق جاننے کے متلاشیوں کے لئے ضروری ہے کہ وہ قدیمی کتابوں کی تلاش کرکے تحقیق کرنا شروع کریں ، یہ طے ہے اگر مذہبی تعصب کی عینک اتار کرکے کوئی تحقیق کرنا شروع کرے تو حق اس پر واضح ہوکر رہے گا باقی اگلی قسطوں میں انشاءاللہ
جاری ......

Comments (0)

There are no comments posted here yet

Leave your comments

Posting comment as a guest. Sign up or login to your account.
0 Characters
Attachments (0 / 3)
Share Your Location

This e-mail address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.  Etaa

طراحی و پشتیبانی توسط گروه نرم افزاری رسانه