میری پیشنگوئی ہے کہ چار پانچ سال بعد کشمیری عوام بھی عبوری صوبے کا مطالبہ کرینگے

جی بی میں نظام حکومت چلانے والوں کے اوپر چیک اینڈ بیلنس کا نظام نہیں، اس لئے یہاں پر کرپشن کی کھلی چھوٹ ہے

گلگت بلتستان کے مسائل کا حل عبوری صوبہ ہے، کشمیر طرز کا سیٹ اپ نہیں، 

پیپلزپارٹی گلگت بلتستان کے صدر کا اسلام ٹائمز سے گفتگو میں کہنا تھا کہ کشمیر اسمبلی کی قرارداد ایک اچھا عمل ہے، گلگت بلتستان کے عوام اسکو ویلکم کرینگے لیکن یہ قرارداد اسوقت آئی، جب گلگت بلتستان عبوری صوبہ بننے کے نزدیک ہے، ہم کشمیری قیادت کو بھی دعوت دیتے ہیں کہ وہ بھی عبوری صوبے کیطرف آئیں، کیونکہ عبوری صوبے کے ذریعے سے ہی دونوں خطوں کے وسائل کا تحفظ ممکن ہے۔

Comments (0)

There are no comments posted here yet

Leave your comments

Posting comment as a guest. Sign up or login to your account.
0 Characters
Attachments (0 / 3)
Share Your Location

This e-mail address is being protected from spambots. You need JavaScript enabled to view it.  Etaa

طراحی و پشتیبانی توسط گروه نرم افزاری رسانه