comintour.net
stroidom-shop.ru
obystroy.com

 گلگت(سٹاف رپورٹر)سپریم اپیلٹ کورٹ گلگت بلتستان نے ہنزہ سے منتخب رکن قانون ساز اسمبلی میر سلیم خان کو نااہل قرار دیدیا، چیف جسٹس رانا محمد شمیم اور جسٹس جاوید اقبال پر مشتمل ڈویژنل بینچ نے ازخود نوٹس کیس اور عبیداللہ بیگ کی پٹیشن پر سماعت کی

گلگت(سٹاف رپورٹر)وزیر اعلی گلگت بلتستان حافظ حفیظ الرحمان نے گلگت میں ڈیڑھ ارب روپے کے ایل پی جی ایئرمکس منصوبے کا سنگ بنیاد رکھ دیا ہے ۔

سیاچن میں برفانی تودے تلے دب کر شہید ہونے والے 3 جوانوں کی نماز جنازہ ادا

اسکردو: گیاری سیکٹر میں برفانی تودے تلے دب کر شہید ہونے والے پاک فوج کے 3 جوانوں کی نمازِ جنازہ ادا کردی گئی۔

اسلام آباد(محمد اسحاق جلال)وزیر تعمیرات عامہ ڈاکٹر محمد اقبال نے انکشاف کیا ہے کہ گلگت بلتستان کو آئینی حقوق ملنے کی تمام امیدیں دم توڑ گئی ہیں جس کی وجہ سے ہم بالکل مایوس ہو گئے ہیں اگر ہمیں پہلے ہی اس بات کا علم ہوتا تو ہم آئینی کمیٹی کے قیام کا مطالبہ نہ کرتے، آئینی کمیٹی نے ڈھائی سال ضائع کر دیئے اس کی کارکرد گی بالکل صفر رہی، کہا جا رہا ہے کہ ہمیں قومی اسمبلی اور سینیٹ میں مبصر کے طور پر نمائندگی ملے گی ہمیں ایسی نمائندگی کی کوئی ضرورت نہیں ہے مبصر کی باتیں ہمارے ساتھ مذاق ہیں ہم مذاق کو ہرگز برداشت نہیں کریں گے۔ ہمارے ساتھ تماشہ نہ لگایا جائے، کے پی این کو دیئے گئے انٹرویو میں انہوں نے کہا کہ ہمیں حقوق ٹکڑوں میں نہیں چاہئیں اگر حقوق دینے ہیں تو ایک ساتھ دیئے جائیں۔ پارلیمنٹ میں تماشہ دیکھنے کیلئے جانے کا ہمیں کوئی شوق نہیں ہے ہمارا متفقہ مطالبہ پانچواں آئینی صوبہ ہے، میرا موقف آئینی حقوق کے معاملے پر بہت ہی سخت ہے میں آئینی معاملے پر ہرگز خاموش نہیں رہوں گا، پانچواں آئینی صوبہ ہمارا بنیادی حق ہے اس حق سے ہرگز ہم پیچھے نہیں ہٹیں گے ہمیں درجہ اول کے شہری تسلیم کئے جائیں میں نے موجودہ اور سابق وزیراعظم کے سامنے کھل کر بات کی ہے ہر فورم پر آئینی حقوق پر گلگت بلتستان کی بھرپور نمائندگی کی ہے ہم کسی سے خوفزدہ ہیں اور نہ ہمارے اوپر کسی کا دبائو ہے انہوں نے کہا کہ ہم اپنی قوم کو غلط راستہ نہیں دکھائیں گے اور دانشمندی کا مظاہرہ کریں گے حقوق کیلئے پارلیمنٹ کے سامنے دھرنا دینا پڑے گا اگر دھرنا دیا گیا تو میں سب سے پہلے ہوں گا جب آئینی حقوق کیلئے فاٹا کے لوگ دھرنا دے سکتے ہیں تو ہم کیوں نہیں دے سکتے ہیں، آئینی حقوق کسی ایک جماعت کا نہیں تمام سیاسی مذہبی جماعتوں کا متفقہ مسئلہ ہے ۔ اس مسئلے کے حل کیلئے تمام جماعتوں کو متحد ہونا پڑے گا اور اپنی جدوجہد تیز کرنا ہو گی، آئینی معاملے پر جو بھی جماعت کوئی پروگرام کرے گی میں اس میں شرکت کروں گا تمام جماعتیں اب متحد ہو جائیں جب تک سیاسی و مذہبی جماعتیں متحد نہیں ہوں گی تب تک مسائل حل نہیں ہوں گے ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ اپوزیشن عدم اعتماد کے معاملے پر بٹ گئی ہے اکثر اپوزیشن اراکین عدم اعتماد کے حق میں نہیں ہیں رکن اسمبلی عمران ندیم بڑے مثبت سیاستدان ہیں وہ عدم اعتماد کی باتوں کے سخت خلاف ہیں انہوں نے کہا کہ عدم اعتماد کے نام پر ہم کسی کو تماشہ لگانے نہیں دیں گے اسمبلی بچوں کا کوئی کھلونا نہیں ہے کہ اسے توڑا جائے ۔ ہم اسمبلی کو توڑنے کی کسی کو اجازت نہیں دیں گے اور نہ ہی عدم اعتماد کی تحریک لانے کی اجازت دیں گے، انہوں نے کہا کہ رکن اسمبلی میر سلیم کے اس الزام میں کوئی حقیقت نہیں ہے کہ کابینہ میں ون مین شو چل رہا ہے اگر میر سلیم کو کوئی شکایت ہے تو پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس میں بات کیوں نہیں کرتے ہیں  انہیں پارلیمانی کمیٹی کے اجلاس میں بات کرنے سے کسی نے روکا تو نہیں ہے ، اپوزیشن کی خواہش ہے کہ حاجی جانبار خان اور میر سلیم اپنا اپنا گروپ بنائیں انشاء اللہ اپوزیشن کے بعض اراکین کی کوشش کبھی کامیاب نہیں ہو گی سارے حکومتی اراکین متحد ہو کر عدم اعتماد کی سازشیں ناکام بنائیں گے۔ ہمیں نہیں معلوم کہ سازشیں کون لوگ کر رہے ہیں ، جو لوگ سازش کر رہے ہیں ان کا ڈٹ کر مقابلہ کریں گے سازشی عناصر عدم اعتماد کی باتیں کر کے عوام میں زندہ رہنا چاہتے ہیں۔

وفاقی حکومت جلد آئین حثیت کا تعین کریں۔

جامعہ روحانیت بلتستان کے مرکزی دفتر قم ایران سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ آئینی حیثیت کے تعین سے جی بی میں ٹیکس کا نفاذ ظلم ہے علماء عوام کے ساتھ کھڑے ہیں،جہاں بھی ظلم ہو علماء عوام کے ساتھ کھڑے ہیں ظلم کے خلاف احتجاج کرنا عوامی کی آئینی و قانونی حق ہے جس سے کوئی روک نہیں سکتے۔ گلگت بلتستان حکومت مظاہرے کو روکنے کی بجائے وفاقی حکومت سے آئین حیثیت کے تعین کا مطالبہ کریں۔ہم وفاقی حکومت سے مطالبہ کرتے ہیں کہ وفاقی حکومت جلد  گلگت بلتستان کے آئین حثیت کا تعین کریں۔

یاد رہے گلگت بلتستان میں بڑے شہروں سمیت مختلف علاقوں میں عوام ٹیکس کے نفاذ کے خلاف مظاہرے کررہے ہیں۔

ذرائع کے مطابق گلگت بلتستان کے شہر اسکردو، شگر، کھرمنگ اور روندو میں غیر قانونی و غیر آئینی ٹیکسز کے خلاف شٹر ڈاؤن ہڑتال کی گئی۔حکومت کی جانب سے نافذ کی جانے والی ٹیکس کے خلاف اسکردو شہر میں تاریخی ہڑتال کی گئی جس کی وجہ سے شدید مشکلات کا سامنا ہے۔عوام کا مطالبہ ہے کہ سب سے پہلے گلگت بلتستان کی آئینی حیثیت کا تعین کیا جائے۔ معتبرذرائع کا کہنا ہے کہ علاقے میں تمام نجی تعلیمی ادارے بھی ہڑتال کے باعث بند رہے جس کی وجہ سے پیر کے روز ہونے والے تمام امتحانات ملتوی کر دئے گئے۔

 

Choose Language

جامعه روحانیت کی خبریں

حسینیہ بلتستانیہ قم

مشاہدات

آج344
کل1646
اس هفته5467
اس ماه27600
ٹوٹل مشاهدات593217

15
Online

جمعہ, 27 اپریل 2018 05:44
.Copyright © jrbpk Institute. All rights reserved
Designed by Islamic Medias Software Team